جو کچھ بھی گزرتا ہے مرے دل پہ گزر جائے

جو کچھ بھی گزرتا ہے مرے دل پہ گزر جائے

اترا ہوا چہرہ مری دھرتی کا نکھر جائے

اک شہر صدا سینے میں آباد ہے لیکن

اک عالم خاموش ہے جس سمت نظر جائے

ہم بھی ہیں کسی کہف کے اصحاب کی مانند

ایسا نہ ہو جب آنکھ کھلے وقت گزر جائے

جب سانپ ہی ڈسوانے کی عادت ہے تو یارو

جو زہر زباں پر ہے وہ دل میں بھی اتر جائے

کشتی ہے مگر ہم میں کوئی نوح نہیں ہے

آیا ہوا طوفان خدا جانے کدھر جائے

میں سایہ کیے ابر کے مانند چلوں گا

اے دوست جہاں تک بھی تری راہ گزر جائے

میں کچھ نہ کہوں اور یہ چاہوں کہ مری بات

خوشبو کی طرح اڑ کے ترے دل میں اتر جائے

(420) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Jo Kuchh Bhi Guzarta Hai Mere Dil Pe Guzar Jae In Urdu By Famous Poet Himayat Ali Shayar. Jo Kuchh Bhi Guzarta Hai Mere Dil Pe Guzar Jae is written by Himayat Ali Shayar. Enjoy reading Jo Kuchh Bhi Guzarta Hai Mere Dil Pe Guzar Jae Poem on Inspiration for Students, Youth, Girls and Boys by Himayat Ali Shayar. Free Dowlonad Jo Kuchh Bhi Guzarta Hai Mere Dil Pe Guzar Jae by Himayat Ali Shayar in PDF.