خزاں کا قرض تو اک اک درخت پر ہے یہاں

خزاں کا قرض تو اک اک درخت پر ہے یہاں

یہ اور بات کہ ہر شاخ بار ور ہے یہاں

جو سوچ سکتا ہے وہ ذہن جل رہا ہے ابھی

جو دیکھ سکتی ہے وہ آنکھ خوں میں تر ہے یہاں

سنے گا کون ان آنکھوں کی بے صدا فریاد

سماعتوں کا تو انداز ہی دگر ہے یہاں

ستایا آج مناسب جگہ پہ بارش نے

اسی بہانے ٹھہر جائیں اس کا گھر ہے یہاں

حصار جسم سے باہر بھی زندگی ہے مجھے

یہ اور بات کہ احساس معتبر ہے یہاں

(478) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

KHizan Ka Qarz To Ek Ik DaraKHt Par Hai Yahan In Urdu By Famous Poet Iqbal Ashhar Qureshi. KHizan Ka Qarz To Ek Ik DaraKHt Par Hai Yahan is written by Iqbal Ashhar Qureshi. Enjoy reading KHizan Ka Qarz To Ek Ik DaraKHt Par Hai Yahan Poem on Inspiration for Students, Youth, Girls and Boys by Iqbal Ashhar Qureshi. Free Dowlonad KHizan Ka Qarz To Ek Ik DaraKHt Par Hai Yahan by Iqbal Ashhar Qureshi in PDF.