زوال فکر و فن تھا اور میں تھا

زوال فکر و فن تھا اور میں تھا

عجب قحط سخن تھا اور میں تھا

پرانے لفظ تفسیریں نئی تھیں

غزل کا بانکپن تھا اور میں تھا

عجب روداد تھی میرے سفر کی

لباس بے شکن تھا اور میں تھا

سزا تھی امتحاں تھا کیا پتہ اک

سلگتا اگنی بن تھا اور میں تھا

وہی اس کی شکایت تھی پرانی

وہی میرا چلن تھا اور میں تھا

وہی مٹی وہی پانی ہوا تھی

وہی میرا وطن تھا اور میں تھا

وہ اک لمحہ کہ میرے سر پہ آصفؔ

بہت دشوار کن تھا اور میں تھا

(503) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Zawal-e-fikr-o-fan Tha Aur Main Tha In Urdu By Famous Poet Iqbal Asif. Zawal-e-fikr-o-fan Tha Aur Main Tha is written by Iqbal Asif. Enjoy reading Zawal-e-fikr-o-fan Tha Aur Main Tha Poem on Inspiration for Students, Youth, Girls and Boys by Iqbal Asif. Free Dowlonad Zawal-e-fikr-o-fan Tha Aur Main Tha by Iqbal Asif in PDF.