صرصر چلی وہ گرم کہ سائے بھی جل گئے

صرصر چلی وہ گرم کہ سائے بھی جل گئے

صحرا میں آ کے یاروں کے حلیے بدل گئے

جب راکھ ہو کے رہ گیا وہ شہر گل رخاں

پھر اس طرف کو بادلوں کے دل کے دل گئے

تن کر کھڑا رہا تو کوئی سامنے نہ تھا

جب جھک گیا تو ہر کسی کے وار چل گئے

کچھ دکھ کی روشنی تھی بڑی تیز اور کچھ

اشکوں کی بارشوں سے بھی چہرے اجل گئے

اک رنگ تھا لہو کا جو اشکوں میں آ گیا

کچھ دل کے درد تھے سو وہ شعروں میں ڈھل گئے

اقبالؔ مثل موج ہوا کب تلک سفر

کیا جانے کس طرف کو وہ چاہت کے یل گئے

(309) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Sarsar Chali Wo Garm Ki Sae Bhi Jal Gae In Urdu By Famous Poet Iqbal Minhas. Sarsar Chali Wo Garm Ki Sae Bhi Jal Gae is written by Iqbal Minhas. Enjoy reading Sarsar Chali Wo Garm Ki Sae Bhi Jal Gae Poem on Inspiration for Students, Youth, Girls and Boys by Iqbal Minhas. Free Dowlonad Sarsar Chali Wo Garm Ki Sae Bhi Jal Gae by Iqbal Minhas in PDF.