بے دلی کیا یوں ہی دن گزر جائیں گے

بے دلی کیا یوں ہی دن گزر جائیں گے

صرف زندہ رہے ہم تو مر جائیں گے

رقص ہے رنگ پر رنگ ہم رقص ہیں

سب بچھڑ جائیں گے سب بکھر جائیں گے

یہ خراباتیان خرد باختہ

صبح ہوتے ہی سب کام پر جائیں گے

کتنی دل کش ہو تم کتنا دلجو ہوں میں

کیا ستم ہے کہ ہم لوگ مر جائیں گے

ہے غنیمت کہ اسرار ہستی سے ہم

بے خبر آئے ہیں بے خبر جائیں گے

(1237) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Be-dili Kya Yunhi Din Guzar Jaenge In Urdu By Famous Poet Jaun Eliya. Be-dili Kya Yunhi Din Guzar Jaenge is written by Jaun Eliya. Enjoy reading Be-dili Kya Yunhi Din Guzar Jaenge Poem on Inspiration for Students, Youth, Girls and Boys by Jaun Eliya. Free Dowlonad Be-dili Kya Yunhi Din Guzar Jaenge by Jaun Eliya in PDF.