دل کی ہر بات دھیان میں گزری

دل کی ہر بات دھیان میں گزری

ساری ہستی گمان میں گزری

ازل داستاں سے اس دم تک

جو بھی گزری اک آن میں گزری

جسم مدت تری عقوبت کی

ایک اک لمحہ جان میں گزری

زندگی کا تھا اپنا عیش مگر

سب کی سب امتحان میں گزری

ہائے وہ ناوک گزارش رنگ

جس کی جنبش کمان میں گزری

وہ گدائی گلی عجب تھی کہ واں

اپنی اک آن بان میں گزری

یوں تو ہم دم بہ دم زمیں پہ رہے

عمر سب آسمان میں گزری

جو تھی دل طائروں کی مہلت بود

تا زمیں وہ اڑان میں گزری

بود تو اک تکان ہے سو خدا

تیری بھی کیا تکان میں گزری

(816) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Dil Ki Har Baat Dhyan Mein Guzri In Urdu By Famous Poet Jaun Eliya. Dil Ki Har Baat Dhyan Mein Guzri is written by Jaun Eliya. Enjoy reading Dil Ki Har Baat Dhyan Mein Guzri Poem on Inspiration for Students, Youth, Girls and Boys by Jaun Eliya. Free Dowlonad Dil Ki Har Baat Dhyan Mein Guzri by Jaun Eliya in PDF.