ہے عجب حال یہ زمانے کا

ہے عجب حال یہ زمانے کا

یاد بھی طور ہے بھلانے کا

پسند آیا بہت ہمیں پیشہ

خود ہی اپنے گھروں کو ڈھانے کا

کاش ہم کو بھی ہو نصیب کبھی

عیش دفتر میں گنگنانے کا

آسماں ہے خموشئ جاوید

میں بھی اب لب نہیں ہلانے کا

جان کیا اب ترا پیالۂ ناف

نشہ مجھ کو نہیں پلانے کا

شوق ہے اس دل درندہ کو

آپ کے ہونٹ کاٹ کھانے کا

اتنا نادم ہوا ہوں خود سے کہ میں

اب نہیں خود کو آزمانے کا

کیا کہوں جان کو بچانے میں

جونؔ خطرہ ہے جان جانے کا

یہ جہاں جونؔ اک جہنم ہے

یاں خدا بھی نہیں ہے آنے کا

زندگی ایک فن ہے لمحوں کو

اپنے انداز سے گنوانے کا

(510) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Hai Ajab Haal Ye Zamane Ka In Urdu By Famous Poet Jaun Eliya. Hai Ajab Haal Ye Zamane Ka is written by Jaun Eliya. Enjoy reading Hai Ajab Haal Ye Zamane Ka Poem on Inspiration for Students, Youth, Girls and Boys by Jaun Eliya. Free Dowlonad Hai Ajab Haal Ye Zamane Ka by Jaun Eliya in PDF.