کبھی کبھی تو بہت یاد آنے لگتے ہو

کبھی کبھی تو بہت یاد آنے لگتے ہو

کہ روٹھتے ہو کبھی اور منانے لگتے ہو

گلا تو یہ ہے تم آتے نہیں کبھی لیکن

جب آتے بھی ہو تو فوراً ہی جانے لگتے ہو

یہ بات جونؔ تمہاری مذاق ہے کہ نہیں

کہ جو بھی ہو اسے تم آزمانے لگتے ہو

تمہاری شاعری کیا ہے برا بھلا کیا ہے

تم اپنے دل کی اداسی کو گانے لگتے ہو

سرود آتش زرین صحن خاموشی

وہ داغ ہے جسے ہر شب جلانے لگتے ہو

سنا ہے کاہکشانوں میں روز و شب ہی نہیں

تو پھر تم اپنی زباں کیوں جلانے لگتے ہو

(1171) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Kabhi Kabhi To Bahut Yaad Aane Lagte Ho In Urdu By Famous Poet Jaun Eliya. Kabhi Kabhi To Bahut Yaad Aane Lagte Ho is written by Jaun Eliya. Enjoy reading Kabhi Kabhi To Bahut Yaad Aane Lagte Ho Poem on Inspiration for Students, Youth, Girls and Boys by Jaun Eliya. Free Dowlonad Kabhi Kabhi To Bahut Yaad Aane Lagte Ho by Jaun Eliya in PDF.