نہ تو دل کا نہ جاں کا دفتر ہے

نہ تو دل کا نہ جاں کا دفتر ہے

زندگی اک زیاں کا دفتر ہے

پڑھ رہا ہوں میں کاغذات وجود

اور نہیں اور ہاں کا دفتر ہے

کوئی سوچے تو سوز کرب جاں

سارا دفتر گماں کا دفتر ہے

ہم میں سے کوئی تو کرے اصرار

کہ زمیں آسماں کا دفتر ہے

ہجر تعطیل جسم و جاں ہے میاں

وصل جسم اور جاں کا دفتر ہے

وہ جو دفتر ہے آسمانی تر

وہ میاں جی یہاں کا دفتر ہے

ہے جو بود و نبود کا دفتر

آخرش یہ کہاں کا دفتر ہے

جو حقیقت ہے دم بہ دم کی یاد

وہ تو اک داستاں کا دفتر ہے

ہو رہا ہے گزشتگاں کا حساب

اور آئندگاں کا دفتر ہے

(190) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Na To Dil Ka Na Jaan Ka Daftar Hai In Urdu By Famous Poet Jaun Eliya. Na To Dil Ka Na Jaan Ka Daftar Hai is written by Jaun Eliya. Enjoy reading Na To Dil Ka Na Jaan Ka Daftar Hai Poem on Inspiration for Students, Youth, Girls and Boys by Jaun Eliya. Free Dowlonad Na To Dil Ka Na Jaan Ka Daftar Hai by Jaun Eliya in PDF.