سب چلے جاؤ مجھ میں تاب نہیں

سب چلے جاؤ مجھ میں تاب نہیں

نام کو بھی اب اضطراب نہیں

خون کر دوں ترے شباب کا میں

مجھ سا قاتل ترا شباب نہیں

اک کتاب وجود ہے تو سہی

شاید اس میں دعا کا باب نہیں

تو جو پڑھتا ہے بوعلی کی کتاب

کیا یہ عالم کوئی کتاب نہیں

اپنی منزل نہیں کوئی فریاد

رخش بھی اپنا بد رکاب نہیں

ہم کتابی سدا کے ہیں لیکن

حسب منشا کوئی کتاب نہیں

بھول جانا نہیں گناہ اسے

یاد کرنا اسے ثواب نہیں

پڑھ لیا اس کی یاد کا نسخہ

اس میں شہرت کا کوئی باب نہیں

(704) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Sab Chale Jao Mujh Mein Tab Nahin In Urdu By Famous Poet Jaun Eliya. Sab Chale Jao Mujh Mein Tab Nahin is written by Jaun Eliya. Enjoy reading Sab Chale Jao Mujh Mein Tab Nahin Poem on Inspiration for Students, Youth, Girls and Boys by Jaun Eliya. Free Dowlonad Sab Chale Jao Mujh Mein Tab Nahin by Jaun Eliya in PDF.