غم ہوتے ہیں جہاں ذہانت ہوتی ہے

غم ہوتے ہیں جہاں ذہانت ہوتی ہے

دنیا میں ہر شے کی قیمت ہوتی ہے

اکثر وہ کہتے ہیں وہ بس میرے ہیں

اکثر کیوں کہتے ہیں حیرت ہوتی ہے

تب ہم دونوں وقت چرا کر لاتے تھے

اب ملتے ہیں جب بھی فرصت ہوتی ہے

اپنی محبوبہ میں اپنی ماں دیکھیں

بن ماں کے لڑکوں کی فطرت ہوتی ہے

اک کشتی میں ایک قدم ہی رکھتے ہیں

کچھ لوگوں کی ایسی عادت ہوتی ہے

(518) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Gham Hote Hain Jahan Zehanat Hoti Hai In Urdu By Famous Poet Javed Akhtar. Gham Hote Hain Jahan Zehanat Hoti Hai is written by Javed Akhtar. Enjoy reading Gham Hote Hain Jahan Zehanat Hoti Hai Poem on Inspiration for Students, Youth, Girls and Boys by Javed Akhtar. Free Dowlonad Gham Hote Hain Jahan Zehanat Hoti Hai by Javed Akhtar in PDF.