زندگی کی آندھی میں ذہن کا شجر تنہا

زندگی کی آندھی میں ذہن کا شجر تنہا

تم سے کچھ سہارا تھا آج ہوں مگر تنہا

زخم خوردہ لمحوں کو مصلحت سنبھالے ہے

ان گنت مریضوں میں ایک چارہ گر تنہا

بوند جب تھی بادل میں زندگی تھی ہلچل میں

قید اب صدف میں ہے بن کے ہے گہر تنہا

تم فضول باتوں کا دل پہ بوجھ مت لینا

ہم تو خیر کر لیں گے زندگی بسر تنہا

اک کھلونا جوگی سے کھو گیا تھا بچپن میں

ڈھونڈتا پھرا اس کو وو نگر نگر تنہا

جھٹپٹے کا عالم ہے جانے کون آدم ہے

اک لحد پہ روتا ہے منہ کو ڈھانپ کر تنہا

(205) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Zindagi Ki Aandhi Mein Zehn Ka Shajar Tanha In Urdu By Famous Poet Javed Akhtar. Zindagi Ki Aandhi Mein Zehn Ka Shajar Tanha is written by Javed Akhtar. Enjoy reading Zindagi Ki Aandhi Mein Zehn Ka Shajar Tanha Poem on Inspiration for Students, Youth, Girls and Boys by Javed Akhtar. Free Dowlonad Zindagi Ki Aandhi Mein Zehn Ka Shajar Tanha by Javed Akhtar in PDF.