بن دیکھے اس کے جاوے رنج و عذاب کیوں کر

بن دیکھے اس کے جاوے رنج و عذاب کیوں کر

وہ خواب میں تو آوے پر آوے خواب کیوں کر

پاس اس نے جو بٹھایا دل اور تلملایا

اب جائے گا خدایا یہ اضطراب کیوں کر

وہ جب سے ہے سفر میں دل مضطرب ہے بر میں

بیٹھیں ہم اپنے گھر میں خانہ خراب کیوں کر

ساقی فراق جاناں حلق اپنے کا ہے درباں

اترے گلے سے پھر یاں قرط شراب کیوں کر

غمگیں ہیں جس کے غم سے واقف نہیں وہ ہم سے

یا رب پھر اس الم سے ہو صبر و تاب کیوں کر

واں ہے سوال ہر دم رکھیے ملاپ کم کم

حیران ہیں کہ دیں ہم اس کا جواب کیوں کر

چھوٹا ہے سن تمہارا مکھڑا ہے پیارا پیارا

پھر ہو بھلا گوارا شرم و حجاب کیوں کر

مجھ کو تو ہے یہ حیرت ایسی رہی جو عصمت

تو ہوگا صرف عشرت عہد شباب کیوں کر

اب طور کی تو اپنے جرأتؔ غزل سنا دے

دیکھیں تو اس کے ہوں گے شعر انتخاب کیوں کر

(718) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Bin Dekhe Uske Jawe Ranj O Azab Kyun Kar In Urdu By Famous Poet Jurat Qalandar Bakhsh. Bin Dekhe Uske Jawe Ranj O Azab Kyun Kar is written by Jurat Qalandar Bakhsh. Enjoy reading Bin Dekhe Uske Jawe Ranj O Azab Kyun Kar Poem on Inspiration for Students, Youth, Girls and Boys by Jurat Qalandar Bakhsh. Free Dowlonad Bin Dekhe Uske Jawe Ranj O Azab Kyun Kar by Jurat Qalandar Bakhsh in PDF.