ہے تیری ہی کائنات جی میں

ہے تیری ہی کائنات جی میں

جی تجھ سے ہے تیری ذات جی میں

تو نے کیا قتل گو بہ ذلت

سمجھا میں اسے نجات جی میں

کیوں غم یہ مجھی پہ مہرباں ہے

سب شاد ہیں ذی حیات جی میں

اس تنگ دہان کے سخن پر

یاں گزرے ہیں سو نکات جی میں

ہر دم بہ ہزار جلوۂ نو

دیکھوں ہوں تری صفات جی میں

دم آنکھوں میں آ رہا ہے جرأتؔ

گزرے ہے یہ آج رات جی میں

آ جاوے تو حال دل سنا لیں

رہ جائے نہ جی کی بات جی میں

(443) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Hai Teri Hi Kaenat Ji Mein In Urdu By Famous Poet Jurat Qalandar Bakhsh. Hai Teri Hi Kaenat Ji Mein is written by Jurat Qalandar Bakhsh. Enjoy reading Hai Teri Hi Kaenat Ji Mein Poem on Inspiration for Students, Youth, Girls and Boys by Jurat Qalandar Bakhsh. Free Dowlonad Hai Teri Hi Kaenat Ji Mein by Jurat Qalandar Bakhsh in PDF.