ہم کب از خود ترے گھر یار چلے آتے ہیں

ہم کب از خود ترے گھر یار چلے آتے ہیں

رہ نہیں سکتے تو ناچار چلے آتے ہیں

لے خبر اس کی شتابی سے کہ عاشق کو ترے

غش پہ غش شوخ ستم گار چلے آتے ہیں

میں تو حیراں ہوں مطب ہے کہ در یار ہے یہ

یاں تو بیمار پہ بیمار چلے آتے ہیں

گھر میں گھبراتے ہیں بے یار تو ہم وحشی سے

سر برہنہ سر بازار چلے آتے ہیں

کھڑے رہ سکتے نہیں در پہ تو حیران سے واں

بیٹھ کر ہم پس دیوار چلے آتے ہیں

کس کے نالوں کی یہ آندھی ہے کہ شکل پر کاہ

آج اڑتے ہوئے کہسار چلے آتے ہیں

(694) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Hum Kab Az-KHud Tere Ghar Yar Chale Aate Hain In Urdu By Famous Poet Jurat Qalandar Bakhsh. Hum Kab Az-KHud Tere Ghar Yar Chale Aate Hain is written by Jurat Qalandar Bakhsh. Enjoy reading Hum Kab Az-KHud Tere Ghar Yar Chale Aate Hain Poem on Inspiration for Students, Youth, Girls and Boys by Jurat Qalandar Bakhsh. Free Dowlonad Hum Kab Az-KHud Tere Ghar Yar Chale Aate Hain by Jurat Qalandar Bakhsh in PDF.