کیوں نہ ہوں حیراں تری ہر بات کا

کیوں نہ ہوں حیراں تری ہر بات کا

حسن مرقع ہے طلسمات کا

روؤں تو خوش ہو کے پیے ہے وہ مے

سمجھے ہے موسم اسے برسات کا

اٹھتی جوانی جو ہے تو دن بہ دن

اور ہی عالم ہے کچھ اس گات کا

گھر میں بلایا ہے تو کچھ منہ سے دو

سیکھو یہ ڈھب ہم سے مدارات کا

شیخ جواں ہوگا تو پی دیکھ اسے

شیشے میں پانی ہے کرامات کا

ہم نہ ملیں تم سے تو نکلے ہے جاں

اور تمہیں عالم ہے مساوات کا

اس نے کی اب کم سخنی اختیار

جس کو مزہ تھا مری ہر بات کا

آنکھ بھی ملتی ہے تو نا آشنا

اب وہ کہاں لطف اشارات کا

رونے کی جا ہے سن اسے ہم نشیں

تو تو ہے محرم مرے اوقات کا

حکم ہوا رات کو آؤ نہ یاں

دن کو رکھو طور ملاقات کا

دل کے اٹکتے ہی ہوا ہے ستم

فرق ملاقات میں دن رات کا

بات نئی سوجھے ہے جرأتؔ تجھے

میں تو ہوں عاشق تری اس بات کا

(998) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Kyun Na Hun Hairan Teri Har Baat Ka In Urdu By Famous Poet Jurat Qalandar Bakhsh. Kyun Na Hun Hairan Teri Har Baat Ka is written by Jurat Qalandar Bakhsh. Enjoy reading Kyun Na Hun Hairan Teri Har Baat Ka Poem on Inspiration for Students, Youth, Girls and Boys by Jurat Qalandar Bakhsh. Free Dowlonad Kyun Na Hun Hairan Teri Har Baat Ka by Jurat Qalandar Bakhsh in PDF.