رات جب تک مرے پہلو میں وہ دل دار نہ تھا

رات جب تک مرے پہلو میں وہ دل دار نہ تھا

دل کو مجھ سے مجھے کچھ دل سے سروکار نہ تھا

گرد اس کوچے کے کس دن یہ گناہ گار نہ تھا

واے حسرت کہ کوئی رخنہ بہ دیوار نہ تھا

کل تو بیمار کو تھا تیرے نہ بستر پہ قرار

آج بستر تھا فقط اور وہ بیمار نہ تھا

شکر اے باد فنا جوں شجر سوختہ میں

تھا تو گلشن میں ولے قابل گل زار نہ تھا

نہیں تل دھرنے کی جاگہ جو بہ افزونیٔ حسن

دیکھا شب اس کو تو اک خال بہ رخسار نہ تھا

رات کیا بات تھی بتلا ترے صدقے جاؤں

آہیں بھرنا وہ ترا خالی از اسرار نہ تھا

دل کو دھر نوک سناں پر وہ یہ بولا ہنس کے

ہم نے منصور کو دیکھا بہ سر دار نہ تھا

بحث میں چشم تر و ابر کی کل تھا جو سماں

کبھی اس شکل سے رونے کا بندھا تار نہ تھا

ذبح ہم سامنے ہوتے ہی ہوئے قاتل کے

باوجودیکہ کوئی ہاتھ میں ہتھیار نہ تھا

بعد مردن مرے تابوت پہ سب روتے تھے

چشم پر آب مگر اک وہ ستم گار نہ تھا

لیک کیا منہ کو چھپاتا تھا جو کہتے تھے یہ لوگ

اس کو ظاہر میں تو مرنے کا کچھ آزار نہ تھا

طبع کہہ اور غزل، ہے یہ نظیریؔ کا جواب

ریختہ یہ جو پڑھا قابل اظہار نہ تھا

(1023) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Raat Jab Tak Mere Pahlu Mein Wo Dildar Na Tha In Urdu By Famous Poet Jurat Qalandar Bakhsh. Raat Jab Tak Mere Pahlu Mein Wo Dildar Na Tha is written by Jurat Qalandar Bakhsh. Enjoy reading Raat Jab Tak Mere Pahlu Mein Wo Dildar Na Tha Poem on Inspiration for Students, Youth, Girls and Boys by Jurat Qalandar Bakhsh. Free Dowlonad Raat Jab Tak Mere Pahlu Mein Wo Dildar Na Tha by Jurat Qalandar Bakhsh in PDF.