سب چلے تیرے آستاں کو چھوڑ

سب چلے تیرے آستاں کو چھوڑ

بد زباں اب تو اس زباں کو چھوڑ

مت اٹھا یار تیرے کوچے میں

آن بیٹھے ہیں دو جہاں کو چھوڑ

وقت سختی کے آہ جاتی ہے

جان بھی جسم ناتواں کو چھوڑ

صحبت راست کب ہو کج سے برآر

تیر آخر چلا کماں کو چھوڑ

دست بیداد باغباں سے آہ

ہم چلے آخر آشیاں کو چھوڑ

باغ سے وہ پھرا تو مرغ چمن

لگ چلے ساتھ گلستاں کو چھوڑ

ناتوانی سے مثل نقش قدم

رہے ناچار کارواں کو چھوڑ

ہم نشیں کہہ تمام قصۂ عشق

آج کل پر نہ داستاں کو چھوڑ

یہ مرا حال ہے جو وہ قاتل

اٹھ گیا دم کے میہماں کو چھوڑ

جس طرح پھیر حلق پر خنجر

دے کوئی مرغ نیم جاں کو چھوڑ

کر جوانی پہ رحم جرأتؔ کی

بس غم عشق اس جواں کو چھوڑ

(509) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Sab Chale Tere Aastan Ko ChhoD In Urdu By Famous Poet Jurat Qalandar Bakhsh. Sab Chale Tere Aastan Ko ChhoD is written by Jurat Qalandar Bakhsh. Enjoy reading Sab Chale Tere Aastan Ko ChhoD Poem on Inspiration for Students, Youth, Girls and Boys by Jurat Qalandar Bakhsh. Free Dowlonad Sab Chale Tere Aastan Ko ChhoD by Jurat Qalandar Bakhsh in PDF.