(۷)

السلام اے کام جان مصطفےٰؐ

السلام اے یادگار مرتضےٰ

السلام اے مقصد خیرالنسا

السلام اے پیشواے دوسرا

کیا ستم ہے خیمے دریا پر ہوئے

اور بے جاں پانی پانی کر ہوئے

لب نہ اک قطرے سے تیرے تر ہوئے

السلام اے تشنہ کام کربلا

زندگانی کی ہے تونے کیا کٹھن

آ مدینے سے ہوا غربت وطن

مر گئے پر اب نہ تربت نے کفن

السلام اے کشتۂ تیغ جفا

چارہ گر سب تیرے بیچارے گئے

دونوں بیٹے کیا ترے پیارے گئے

یار بھائی سب ترے مارے گئے

السلام اے بیکس دشت وغا

گھر ترا یک بار ویراں ہوگیا

دم نہ مارا گوکہ بے جاں ہوگیا

خاک سے مل کر تو یکساں ہوگیا

السلام اے رفتۂ راہ رضا

ماجرا تیرا نہایت ہے شگرف

رنج میں طاقت ہوئی سب تیری صرف

خوں ہوا دل پر نہ نکلا منھ سے حرف

السلام اے غنچۂ باغ حیا

شان کیا کیسی امارت تیرے بعد

ہوگیا اسباب غارت تیرے بعد

پچھلوں کی اب ہے حقارت تیرے بعد

السلام اے لائق مدح و ثنا

گوش زد ایسا نہیں ظلم عیاں

طعن کے ہمراہ پھر تیغ و سناں

غم سا تیرا غم ہو تو کریے بیاں

السلام اے مبتلاے صدبلا

کس جگہ آیا کہ یوں حیراں ہوا

کن سیہ کاسوں کا تو مہماں ہوا

کس قدر محتاج آب و ناں ہوا

السلام اے خلق کے حاجت روا

تجھ سے خوبی امامت چارچند

تیرا رایت تھا ولایت میں بلند

تیرے در کا ہر گدا اقبال مند

السلام اے شاہ اقلیم ولا

تیرے سجدے میں سدا اہل یقیں

صبح خیزوں کی ترے در پر جبیں

وائے شامی جن کو تجھ سے بغض و کیں

السلام اے قبلۂ اہل صفا

حیف تو افسوس تو اے آہ تو

نے نے رحمت تو زہے تو واہ تو

جی سے گذرا فی سبیل اللہ تو

السلام اے عاشق طرز فنا

سانحہ تیرا بھی یاں ہے یادگار

دل جگر لے کر گیا دونوں فگار

اک پسر چھوڑا ہے سو بیمار و زار

السلام اے دردمندوں کی دوا

دل کو تیری آرزو ہر صبح و شام

جی کو تیری ہی تمنا ہے مدام

جان و دل صدقے کیے حاصل کلام

السلام اے جان و دل کے مدعا

چشم رکھیں تجھ سے سب درویش و شاہ

کج رکھیں تیرے بھروسے پر کلاہ

آفتاب حشر سے دے تو پناہ

السلام اے سایۂ لطف خدا

میرؔ داخل ظلم کے ماروں میں ہے

یعنی تیرے تعزیت داروں میں ہے

مرحمت کر گو گنہگاروں میں ہے

السلام اے شافع روز جزا

(1090) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

In Urdu By Famous Poet Mir Taqi Mir. is written by Mir Taqi Mir. Enjoy reading  Poem on Inspiration for Students, Youth, Girls and Boys by Mir Taqi Mir. Free Dowlonad  by Mir Taqi Mir in PDF.