مسدس ترجیع بند در مدح حضرت علیؓ

چیدہ خواروں میں شہ روم ترے صبح و شام

ریزہ چینی سے تری بادشہ چیں کا قیام

حبشی ہندی صفاہانی بخارائی تمام

ہیں ترے دست نگر لیجیے کس کس کا نام

یا علی کیست کہ شرمندۂ احسان تو نیست

بر سر خوان کرم کیست کہ مہمان تو نیست

گرسنہ چشم ترا آدم و سب اس کے خلف

تو جو دعوت کرے تو آویں فرشتے صف صف

دہر کا راتبہ ہے بحر ترا کشتی بہ کف

مہر و مہ دیکھتے ہیں تیرے ہی ہاتھوں کی طرف

یا علی کیست کہ شرمندۂ احسان تو نیست

بر سر خوان کرم کیست کہ مہمان تو نیست

سایہ گستر دوجہاں کا ہے ترا لطف عمیم

دے تو جنت کی نعیم اور تو ہی فوز عظیم

تجھ سے مامول عطا سب تو کریم ابن کریم

ہووے یعقوب کہ اسحاق کہ ہو ابراہیم

یا علی کیست کہ شرمندۂ احسان تو نیست

بر سر خوان کرم کیست کہ مہمان تو نیست

مردمی کا تری دریا نہیں رکھتا ہے کنار

ایک موجے میں ترے سینکڑوں بیڑے ہوئے پار

کاڑھے طوفان بلا سے تری ہمت نے پار

نوح ممنون ہے یونس ہے ترا شکرگزار

یا علی کیست کہ شرمندۂ احسان تو نیست

بر سر خوان کرم کیست کہ مہمان تو نیست

اہل عالم متمتع رہے ہیں تجھ سے مدام

مائدہ طور پہنچتا تھا ترے ہاں سے طعام

من و سلویٰ تھا فرستادہ کبھو بہر انام

قول عیسیٰ بھی یہی تھا یہی موسیٰ کا کلام

یا علی کیست کہ شرمندۂ احسان تو نیست

بر سر خوان کرم کیست کہ مہمان تو نیست

ہے بچھا شرق سے تا غرب ترا دسترخوان

جس پہ مہمان ہے ہر شام و سحر خلق جہان

آسماں یاں کی گدائی سے بھرے ہے انبان

ماہ و خورشید کو ملتی ہیں یہاں سے دو نان

یا علی کیست کہ شرمندۂ احسان تو نیست

بر سر خوان کرم کیست کہ مہمان تو نیست

سر شاہان زمانہ تری خاک درگاہ

کج رکھیں تیرے بھروسے پہ فقیر اپنی کلاہ

منھ ترا تکتے رہیں عارف و کامل آگاہ

تجھ سے سب پہنچے ہیں مقصود کو قصہ کوتاہ

یا علی کیست کہ شرمندۂ احسان تو نیست

بر سر خوان کرم کیست کہ مہمان تو نیست

نام حاتم کا خنک جیسے لطیفہ مستور

معن زائد کا تری بزم میں زائد مشہور

رنگ رنگ اطعمہ ہیں بذل پھر اس درجہ وفور

کیا خداوندی ہے اللہ خدائی مشکور

یا علی کیست کہ شرمندۂ احسان تو نیست

بر سر خوان کرم کیست کہ مہمان تو نیست

لطف ہے عام ترا سب تجھی سے پاتے ہیں

تیری دولت ہے جو یہ شاہ و گدا کھاتے ہیں

شکر نعمت یہ نہیں تیرا بجا لاتے ہیں

اس جہاں سے بھی یہی کہتے ہوئے جاتے ہیں

یا علی کیست کہ شرمندۂ احسان تو نیست

بر سر خوان کرم کیست کہ مہمان تو نیست

ارض میں اور سماوات میں سب تیرا مال

جس کا گھر چاہے تو کر دیوے اسے مالامال

روز بہبود کا تجھ سے سر گردوں میں خیال

اپنی خوبی کو زمیں رات کرے تجھ سے سوال

یا علی کیست کہ شرمندۂ احسان تو نیست

بر سر خوان کرم کیست کہ مہمان تو نیست

فی الحقیقت تری مہمان خلائق ہے سب

تیرے دروازے سے محروم کوئی آوے ہے کب

ریجھنے ہی کی ہے گوں تیری مروت کا ہے ڈھب

جاؤں ناکام اگر میں تو نہایت ہے عجب

یا علی کیست کہ شرمندۂ احسان تو نیست

بر سر خوان کرم کیست کہ مہمان تو نیست

کاسہ لیسی تیرے مطبخ کی کریں خرد و کبیر

ہاتھ پھیلائے رہے آگے ترے جم غفیر

ظرف ہیں جن کے بڑے سب وے یہیں کے ہیں فقیر

آدم و جن و ملک شاہ و گدا میر و وزیر

یا علی کیست کہ شرمندۂ احسان تو نیست

بر سر خوان کرم کیست کہ مہمان تو نیست

(465) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

In Urdu By Famous Poet Mir Taqi Mir. is written by Mir Taqi Mir. Enjoy reading  Poem on Inspiration for Students, Youth, Girls and Boys by Mir Taqi Mir. Free Dowlonad  by Mir Taqi Mir in PDF.