تضمین مطلع خود با مطلع استاد

نہ اسکندر نہ دارا ہے نہ کسریٰ ہے نہ قیصر ہے

یہ بیت المال ملک بے وفا بے وارثا گھر ہے

جہان کہنہ خلقے را بہ دل داغ ہوس ماندہ

بیا ساقی کہ ایں ویرانہ از بسیار کس ماندہ

خودبخود کھویا گیا ہے کتنے روزوں سے فقیر

وہ نہیں ہے اب جو تم نے پیش ازیں دیکھا تھا میرؔ

دوستاں ظلمے بحال نامرادم رفتہ است

داشتم چیزے کہ من بودم زیادم رفتہ است

نہ اپنے در سے مجھے دور کر شتابی سے

کہ آہ یھاں تئیں پہنچا ہوں کس خرابی سے

ز ضعف دست بدیوار دادہ آمدہ ام

بہر دو گام زمانے ستادہ آمدہ ام

مشہور ہیں عالم میں تو کیا ہیں بھی کہیں ہم

القصہ نہ درپے ہو ہمارے کہ نہیں ہم

عنقا سر و برگیم مپرس از فقرا ہیچ

عالم ہمہ افسانۂ ما دارد و ما ہیچ

میں رہ گیا تھا لاجرم شکوے سے جب اے مہ ترے

تب کی بھلا تب ہی گئی ہنگامہ تھا ہمرہ ترے

اکنوں کہ تنہا دیدمت لطف ارنہ آزارے بکن

تلخے بگو سنگے بزن تیغے بکش کارے بکن

چمن میں دہر کے ہنستا نہ رہ برنگ گل

کہ صبح شاخ پہ یہ بیت پڑھتی تھی بلبل

دریں حدیقہ بہار و خزاں ہم آغوش است

زمانہ جام بدست و جنازہ بر دوش است

رہے ہم تشنگاں سے ذمے منت یار کے کیسی

کہ پھر پانی نہ مانگا ہم لگائی ایک ہی ایسی

بامید کسے نگذاشت بے دادش دل ما را

خدا اجرے دہد در کشتن ما قاتل ما را

دوری ہی میں طاقت نہ رہی بات کی آخر

روزی نہ ہوئی رات ملاقات کی آخر

زہر غم ہجر تو بجاں کارگر افتاد

امید وصال تو بہ عمر دگر افتاد

آشناے کفر و دیں عاشق نہیں ہوتے ہیں میرؔ

جانتے ہیں طور میرے سب چنانچہ خرد و پیر

کعبہ و بت خانہ را بیگانہ می دانیم ما

یا در دل یا در مے خانہ می دانیم ما

ہے خوش وہ کہ یاں سر بگریباں ہی رہا ہے

اس باغ میں وا ہونے کو بدیمن کہا ہے

بسیار ز دل تنگی خود غنچہ غمین است

غافل کہ شگفتن نفس بازپسین است

متاع دل نہ لے جاؤں جو واپس کیا کروں جاناں

خریداری نہ کی تونے رہا میں دیر سرگرداں

بسوداے ہوس عمرے دریں بازار گردیدم

کنوں گرد سرم گرداں کہ من بسیار گردیدم

حواس و ہوش و خرد جان و دل شکیب و تواں

چلے ہیں عزم سفر کرنے سے ترے سب یاں

ز رفتن تو کسے بازپس نمی ماند

تو می روی و دریں شہر کس نمی ماند

کہاں کرنے میں خوں تیزی نہیں کی

یہیں کچھ ان نے خوں ریزی نہیں کی

سرش گردم کہ ہر جا جلوہ گر بود

سر بازار او بازار سر بود

اس آستانے کے سگ کے نہیں برابر ہم

کہیں زیادہ سخن اپنے منھ سے کیوں کر ہم

میان ما و سگ یار فرق بسیار است

چرا کہ ما سگ اوئیم و او سگ یار است

محرماں کیا کہوں میں اپنے نوشتے کی بدی

بخت نے آہ مری بات تنک کہنے نہ دی

دل کہ طومار وفا بود من محزوں را

پارہ کردند ندانستہ بتاں مضموں را

کہتے نہیں خلوت میں تو بار دے عالم کو

یا آئینہ سا ہووے دیدار ترا ہم کو

تاچند نہاں باشی جاناں نفسے بنما

دیوانہ شدی تنہا خود را بکسے بنما

نہ لاگے وہم جس جا کچھ وہاں ہو قادراندازی

ہدف ہونا خدنگ جور کا تیرے نہیں بازی

ز شست صاف اے ابروکماں ازبس خطر دارم

تو می بینی بسوے تیر و من فکر دگر دارم

(984) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

In Urdu By Famous Poet Mir Taqi Mir. is written by Mir Taqi Mir. Enjoy reading  Poem on Inspiration for Students, Youth, Girls and Boys by Mir Taqi Mir. Free Dowlonad  by Mir Taqi Mir in PDF.