نقش ناز بت طناز بہ آغوش رقیب (ردیف .. ے)

نقش ناز بت طناز بہ آغوش رقیب

پاۓ طاؤس پئے خامۂ مانی مانگے

تو وہ بد خو کہ تحیر کو تماشا جانے

غم وہ افسانہ کہ آشفتہ بیانی مانگے

وہ تپ عشق تمنا ہے کہ پھر صورت شمع

شعلہ تا نبض جگر ریشہ داوانی مانگے

تشنۂ خون تماشا جو وہ پانی مانگے

آئینہ رخصت انداز روانی مانگے

رنگ نے گل سے دم عرض پریشانیٔ بزم

برگ گل ریزۂ مینا کی نشانی مانگے

زلف تحریر پریشان تقاضا ہے مگر

شانہ ساں مو بہ زباں خامۂ مانی مانگے

آمد خط سے نہ کر خندۂ شیریں کہ مباد

چشم مور آئینۂ دل نگرانی مانگے

ہوں گرفتار کمیں گاہ تغافل کہ جہاں

خواب صیاد سے پرواز گرانی مانگے

چشم پرواز و نفس خفتہ مگر ضعف امید

شہپر کاہ پئے مژدہ رسانی مانگے

وحشت شور تماشا ہے کہ جوں نکہت گل

نمک زخم جگر بال فشانی مانگے

گر ملے ؔحضرت بیدل کا خط لوح مزار

اسدؔ آئینۂ پرواز معانی مانگے

رنگ نے گل سے دم عرض پریشانیٔ بزم

برگ گل ریزۂ مینا کی نشانی مانگے

(2150) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Naqsh-e-naz-e-but-e-tannaz Ba-aghosh-e-raqib In Urdu By Famous Poet Mirza Ghalib. Naqsh-e-naz-e-but-e-tannaz Ba-aghosh-e-raqib is written by Mirza Ghalib. Enjoy reading Naqsh-e-naz-e-but-e-tannaz Ba-aghosh-e-raqib Poem on Inspiration for Students, Youth, Girls and Boys by Mirza Ghalib. Free Dowlonad Naqsh-e-naz-e-but-e-tannaz Ba-aghosh-e-raqib by Mirza Ghalib in PDF.