سرگشتگی میں عالم ہستی سے یاس ہے

سرگشتگی میں عالم ہستی سے یاس ہے

تسکیں کو دے نوید کہ مرنے کی آس ہے

لیتا نہیں مرے دل آوارہ کی خبر

اب تک وہ جانتا ہے کہ میرے ہی پاس ہے

کیجیے بیاں سرور تپ غم کہاں تلک

ہر مو مرے بدن پہ زبان سپاس ہے

ہے وہ غرور حسن سے بیگانۂ وفا

ہرچند اس کے پاس دل حق شناس ہے

پی جس قدر ملے شب مہتاب میں شراب

اس بلغمی مزاج کو گرمی ہی راس ہے

ہر اک مکان کو ہے مکیں سے شرف اسدؔ

مجنوں جو مر گیا ہے تو جنگل اداس ہے

کیا غم ہے اس کو جس کا علیؔ سا امام ہو

اتنا بھی اے فلک زدہ کیوں بد حواس ہے

(955) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Sar-gashtagi Mein Aalam-e-hasti Se Yas Hai In Urdu By Famous Poet Mirza Ghalib. Sar-gashtagi Mein Aalam-e-hasti Se Yas Hai is written by Mirza Ghalib. Enjoy reading Sar-gashtagi Mein Aalam-e-hasti Se Yas Hai Poem on Inspiration for Students, Youth, Girls and Boys by Mirza Ghalib. Free Dowlonad Sar-gashtagi Mein Aalam-e-hasti Se Yas Hai by Mirza Ghalib in PDF.