اب وہ طوفاں ہے نہ وہ شور ہواؤں جیسا

اب وہ طوفاں ہے نہ وہ شور ہواؤں جیسا

دل کا عالم ہے ترے بعد خلاؤں جیسا

کاش دنیا مرے احساس کو واپس کر دے

خامشی کا وہی انداز صداؤں جیسا

پاس رہ کر بھی ہمیشہ وہ بہت دور ملا

اس کا انداز تغافل تھا خداؤں جیسا

کتنی شدت سے بہاروں کو تھا احساس‌ مآل

پھول کھل کر بھی رہا زرد خزاؤں جیسا

کیا قیامت ہے کہ دنیا اسے سردار کہے

جس کا انداز سخن بھی ہو گداؤں جیسا

پھر تری یاد کے موسم نے جگائے محشر

پھر مرے دل میں اٹھا شور ہواؤں جیسا

بارہا خواب میں پا کر مجھے پیاسا محسنؔ

اس کی زلفوں نے کیا رقص گھٹاؤں جیسا

(271) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Ab Wo Tufan Hai Na Wo Shor Hawaon Jaisa In Urdu By Famous Poet Mohsin Naqvi. Ab Wo Tufan Hai Na Wo Shor Hawaon Jaisa is written by Mohsin Naqvi. Enjoy reading Ab Wo Tufan Hai Na Wo Shor Hawaon Jaisa Poem on Inspiration for Students, Youth, Girls and Boys by Mohsin Naqvi. Free Dowlonad Ab Wo Tufan Hai Na Wo Shor Hawaon Jaisa by Mohsin Naqvi in PDF.