بھڑکائیں مری پیاس کو اکثر تری آنکھیں

بھڑکائیں مری پیاس کو اکثر تری آنکھیں

صحرا مرا چہرا ہے سمندر تری آنکھیں

پھر کون بھلا داد تبسم انہیں دے گا

روئیں گی بہت مجھ سے بچھڑ کر تری آنکھیں

خالی جو ہوئی شام غریباں کی ہتھیلی

کیا کیا نہ لٹاتی رہیں گوہر تیری آنکھیں

بوجھل نظر آتی ہیں بظاہر مجھے لیکن

کھلتی ہیں بہت دل میں اتر کر تری آنکھیں

اب تک مری یادوں سے مٹائے نہیں مٹتا

بھیگی ہوئی اک شام کا منظر تری آنکھیں

ممکن ہو تو اک تازہ غزل اور بھی کہہ لوں

پھر اوڑھ نہ لیں خواب کی چادر تری آنکھیں

میں سنگ صفت ایک ہی رستے میں کھڑا ہوں

شاید مجھے دیکھیں گی پلٹ کر تری آنکھیں

یوں دیکھتے رہنا اسے اچھا نہیں محسنؔ

وہ کانچ کا پیکر ہے تو پتھر تری آنکھیں

(388) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

BhaDkaen Meri Pyas Ko Aksar Teri Aankhen In Urdu By Famous Poet Mohsin Naqvi. BhaDkaen Meri Pyas Ko Aksar Teri Aankhen is written by Mohsin Naqvi. Enjoy reading BhaDkaen Meri Pyas Ko Aksar Teri Aankhen Poem on Inspiration for Students, Youth, Girls and Boys by Mohsin Naqvi. Free Dowlonad BhaDkaen Meri Pyas Ko Aksar Teri Aankhen by Mohsin Naqvi in PDF.