ہوائے ہجر میں جو کچھ تھا اب کے خاک ہوا

ہوائے ہجر میں جو کچھ تھا اب کے خاک ہوا

کہ پیرہن تو گیا تھا بدن بھی چاک ہوا

اب اس سے ترک تعلق کروں تو مر جاؤں

بدن سے روح کا اس درجہ اشتراک ہوا

یہی کہ سب کی کمانیں ہمیں پہ ٹوٹی ہیں

چلو حساب صف دوستاں تو پاک ہوا

وہ بے سبب یوں ہی روٹھا ہے لمحہ بھر کے لئے

یہ سانحہ نہ سہی پھر بھی کرب‌ ناک ہوا

اسی کے قرب نے تقسیم کر دیا آخر

وہ جس کا ہجر مجھے وجہ انہماک ہوا

شدید وار نہ دشمن دلیر تھا محسنؔ

میں اپنی بے خبری سے مگر ہلاک ہوا

(434) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Hawa-e-hijr Mein Jo Kuchh Tha Ab Ke KHak Hua In Urdu By Famous Poet Mohsin Naqvi. Hawa-e-hijr Mein Jo Kuchh Tha Ab Ke KHak Hua is written by Mohsin Naqvi. Enjoy reading Hawa-e-hijr Mein Jo Kuchh Tha Ab Ke KHak Hua Poem on Inspiration for Students, Youth, Girls and Boys by Mohsin Naqvi. Free Dowlonad Hawa-e-hijr Mein Jo Kuchh Tha Ab Ke KHak Hua by Mohsin Naqvi in PDF.