سارے لہجے ترے بے زماں ایک میں

سارے لہجے ترے بے زماں ایک میں

اس بھرے شہر میں رائیگاں ایک میں

وصل کے شہر کی روشنی ایک تو

ہجر کے دشت میں کارواں ایک میں

بجلیوں سے بھری بارشیں زور پر

اپنی بستی میں کچا مکاں ایک میں

حسرتوں سے اٹے آسماں کے تلے

جلتی بجھتی ہوئی کہکشاں ایک میں

مجھ کو فارغ دنوں کی امانت سمجھ

بھولی بسری ہوئی داستاں ایک میں

رونقیں شور میلے جھمیلے ترے

اپنی تنہائی کا رازداں ایک میں

ایک میں اپنی ہی زندگی کا بھرم

اپنی ہی موت پر نوحہ خواں ایک میں

اس طرف سنگ باری ہر اک بام سے

اس طرف آئنوں کی دکاں ایک میں

وہ نہیں ہے تو محسنؔ یہ مت سوچنا

اب بھٹکتا پھروں گا کہاں ایک میں

(279) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Sare Lahje Tere Be-zaman Ek Main In Urdu By Famous Poet Mohsin Naqvi. Sare Lahje Tere Be-zaman Ek Main is written by Mohsin Naqvi. Enjoy reading Sare Lahje Tere Be-zaman Ek Main Poem on Inspiration for Students, Youth, Girls and Boys by Mohsin Naqvi. Free Dowlonad Sare Lahje Tere Be-zaman Ek Main by Mohsin Naqvi in PDF.