غروب ہوتے ہوئے سورجوں کے پاس رہے

غروب ہوتے ہوئے سورجوں کے پاس رہے

اداس شام کی مانند ہم اداس رہے

کھنڈر سا ایک مکاں تاکتا ہے رستوں کو

نہ جانے آج کہاں اس کے غم شناس رہے

بہار آئی تو سج دھج کے ہو گئے تیار

درخت صرف خزاؤں میں بے لباس رہے

یہ کہہ کے ہو گئے تھوڑے سے بے وفا ہم بھی

ہمیشہ کون محبت میں دیوداس رہے

مرے خیال میں توہین ہے عقیدت کی

سمندروں میں رہوں اور لبوں پہ پیاس رہے

(1235) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Ghurub Hote Hue Surajon Ke Pas Rahe In Urdu By Famous Poet Wafa Naqvi. Ghurub Hote Hue Surajon Ke Pas Rahe is written by Wafa Naqvi. Enjoy reading Ghurub Hote Hue Surajon Ke Pas Rahe Poem on Inspiration for Students, Youth, Girls and Boys by Wafa Naqvi. Free Dowlonad Ghurub Hote Hue Surajon Ke Pas Rahe by Wafa Naqvi in PDF.