دکھ درد میں ہمیشہ نکالے تمہارے خط

دکھ درد میں ہمیشہ نکالے تمہارے خط

اور مل گئی خوشی تو اچھالے تمہارے خط

سب چوڑیاں تمہاری سمندر کو سونپ دیں

اور کر دیے ہوا کے حوالے تمہارے خط

میرے لہو میں گونج رہا ہے ہر ایک لفظ

میں نے رگوں کے دشت میں پالے تمہارے خط

یوں تو ہیں بے شمار وفا کی نشانیاں

لیکن ہر ایک شے سے نرالے تمہارے خط

جیسے ہو عمر بھر کا اثاثہ غریب کا

کچھ اس طرح سے میں نے سنبھالے تمہارے خط

اہل ہنر کو مجھ پہ وصیؔ اعتراض ہے

میں نے جو اپنے شعر میں ڈھالے تمہارے خط

پروا مجھے نہیں ہے کسی چاند کی وصیؔ

ظلمت کے دشت میں ہیں اجالے تمہارے خط

(362) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

In Urdu By Famous Poet Wasi Shah. is written by Wasi Shah. Enjoy reading  Poem on Inspiration for Students, Youth, Girls and Boys by Wasi Shah. Free Dowlonad  by Wasi Shah in PDF.