کوئی پوچھے مرے مہتاب سے میرے ستاروں سے

کوئی پوچھے مرے مہتاب سے میرے ستاروں سے

چھلکتا کیوں نہیں سیلاب میں پانی کناروں سے

مکمل ہو تو سچائی کہاں تقسیم ہوتی ہے

یہ کہنا ہے محبت کے وفا کے حصہ داروں سے

ٹھہر جائے در و دیوار پر جب تیسرا موسم

نہیں کچھ فرق پڑتا پھر خزاؤں سے بہاروں سے

بگولے آگ کے رقصاں رہے تا دیر ساحل پر

سمندر کا سمندر چھپ گیا اڑتے شراروں سے

مری ہر بات پس منظر سے کیوں منسوب ہوتی ہے

مجھے آواز سی آتی ہے کیوں اجڑے دیاروں سے

جہاں تا حد بینائی مسافر ہی مسافر ہوں

نشاں قدموں کے مٹ جاتے ہیں ایسی رہ گزاروں سے

(656) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Koi Puchhe Mere Mahtab Se Mere Sitaron Se In Urdu By Famous Poet Yasmeen Hameed. Koi Puchhe Mere Mahtab Se Mere Sitaron Se is written by Yasmeen Hameed. Enjoy reading Koi Puchhe Mere Mahtab Se Mere Sitaron Se Poem on Inspiration for Students, Youth, Girls and Boys by Yasmeen Hameed. Free Dowlonad Koi Puchhe Mere Mahtab Se Mere Sitaron Se by Yasmeen Hameed in PDF.