ہر گھڑی چلتی ہے تلوار ترے کوچے میں

ہر گھڑی چلتی ہے تلوار ترے کوچے میں

روز مر رہتے ہیں دو چار ترے کوچے میں

حال سر کا مرے ظاہر ہے ترے کیا کیجے

کوئی ثابت بھی ہے دیوار ترے کوچے میں

شکل کو کیونکہ نہ ہر دفعہ بدل کر آؤں

ہیں مری تاک میں اغیار ترے کوچے میں

غم سے بدلی ہے مری شکل تو بے خوف و خطر

دن کو بھی آتے ہیں سو بار ترے کوچے میں

نہ کرے سوئے چمن بھول کے بھی رخ ہرگز

آن کر بلبل گل زار ترے کوچے میں

نرگستاں نہ سمجھ کھولی ہوئی آنکھوں کو

ہیں ترے طالب دیدار ترے کوچے میں

لائے جب گھر سے تو بے ہوش پڑا تھا عارفؔ

ہو گیا آن کے ہشیار ترے کوچے میں

(571) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Har GhaDi Chalti Hai Talwar Tere Kuche Mein In Urdu By Famous Poet Zain-ul-Abideen Khan Arif. Har GhaDi Chalti Hai Talwar Tere Kuche Mein is written by Zain-ul-Abideen Khan Arif. Enjoy reading Har GhaDi Chalti Hai Talwar Tere Kuche Mein Poem on Inspiration for Students, Youth, Girls and Boys by Zain-ul-Abideen Khan Arif. Free Dowlonad Har GhaDi Chalti Hai Talwar Tere Kuche Mein by Zain-ul-Abideen Khan Arif in PDF.