قیامت کا کوئی ہنگام ابھرے

قیامت کا کوئی ہنگام ابھرے

اجالے ڈوب جائیں شام ابھرے

کسی تلوار کی قاتل زباں پر

لہو چہکے ہمارا نام ابھرے

گرے گلیوں کے قدموں پر اندھیرا

فضا میں روشنئ بام ابھرے

ہیں سطح بحر پر موجیں پریشاں

جو دن ڈوبے تو کوئی شام ابھرے

ہزاروں رنگ پرچم سرنگوں ہیں

وہ ہم ہی تھے کہ بس گم نام ابھرے

ہماری ابتدا مٹی میں اک راز

ہمارے واسطے انجام ابھرے

(521) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Qayamat Ka Koi Hangam Ubhre In Urdu By Famous Poet Zakauddin Shaya.n. Qayamat Ka Koi Hangam Ubhre is written by Zakauddin Shaya.n. Enjoy reading Qayamat Ka Koi Hangam Ubhre Poem on Inspiration for Students, Youth, Girls and Boys by Zakauddin Shaya.n. Free Dowlonad Qayamat Ka Koi Hangam Ubhre by Zakauddin Shaya.n in PDF.