صحرا میں گھٹا کا منتظر ہوں

صحرا میں گھٹا کا منتظر ہوں

پھر اس کی وفا کا منتظر ہوں

اک بار نہ جس نے مڑ کے دیکھا

اس جان صبا کا منتظر ہوں

بیٹھا ہوں درون‌‌ خانۂ غم

سیلاب بلا کا منتظر ہوں

جان آب بقا کھوج میں ہے

میں موج فنا کا منتظر ہوں

کھل جاؤں گا اپنے آپ سے میں

تحسین صبا کا منتظر ہوں

اس دور میں خواہش طرب ہے

مدفن میں ہوا کا منتظر ہوں

ماضی کی سزا بھگت رہا ہوں

فردا کی سزا کا منتظر ہوں

شاید کہ وہاں مفر ہو غم سے

تسخیر‌ خلا کا منتظر ہوں

ہاتھوں میں ہے میرے دامن شب

سورج کی صدا کا منتظر ہوں

برسوں سے کھڑا ہوں ہاتھ اٹھائے

تاثیر دعا کا منتظر ہوں

میرا تو خدا کبھی نہیں تھا

میں کس کے خدا کا منتظر ہوں

کہتے ہیں جسے نظرؔ مسافر

اس آبلہ پا کا منتظر ہوں

(698) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Sahra Mein GhaTa Ka Muntazir Hun In Urdu By Famous Poet Zuhoor Nazar. Sahra Mein GhaTa Ka Muntazir Hun is written by Zuhoor Nazar. Enjoy reading Sahra Mein GhaTa Ka Muntazir Hun Poem on Inspiration for Students, Youth, Girls and Boys by Zuhoor Nazar. Free Dowlonad Sahra Mein GhaTa Ka Muntazir Hun by Zuhoor Nazar in PDF.