زندگی اب رہے خطا کب تک

زندگی اب رہے خطا کب تک

جرم کی بارہا سزا کب تک

ناخدا ہوں میں اپنی کشتی کا

یہ خداؤں کا سلسلہ کب تک

اپنی پتھرا گئی ہیں آنکھیں بھی

حسن پردہ اٹھائے گا کب تک

کون پکڑے گا بھاگتے سائے

کون دیکھے گا راستہ کب تک

غالباً اور شاہراہیں ہیں

ایک ہی بند راستہ کب تک

آدمی آدمی کا دشمن ہے

جانے ہو مہرباں خدا کب تک

بے سبب پھر رہے ہیں مدت سے

کیجیے وقت کا گلا کب تک

کام اپنا ہریؔ پرستش ہے

بے اثر پھر رہے دعا کب تک

(335) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Zindagi Ab Rahe KHata Kab Tak In Urdu By Famous Poet Hari Mehta. Zindagi Ab Rahe KHata Kab Tak is written by Hari Mehta. Enjoy reading Zindagi Ab Rahe KHata Kab Tak Poem on Inspiration for Students, Youth, Girls and Boys by Hari Mehta. Free Dowlonad Zindagi Ab Rahe KHata Kab Tak by Hari Mehta in PDF.