خاموش اس طرح سے نہ جل کر دھواں اٹھا

خاموش اس طرح سے نہ جل کر دھواں اٹھا

اے شمع کچھ تو بول کبھی تو زباں اٹھا

بت بن کے چپکے فتنے نہ یوں میری جاں اٹھا

منہ میں اگر زباں ہے تو لطف زباں اٹھا

ہے کوسوں دور منزل انجام گفتگو

تیزی کے ساتھ اپنے قدم اے زباں اٹھا

ڈر ہے یہی کہ کشتی مضموں نہ ڈوب جائے

رہ رہ کے اتنی موجیں نہ بحر زباں اٹھا

اب دور میں ہے رندوں کے پیمانۂ کلام

پھر آ گئی بہار پھر ابر زباں اٹھا

کر اس قدر نہ ذوق تکلم کو شرمسار

اپنا سر نیاز کبھی تو زباں اٹھا

کہتا ہے قدرؔ دیکھ کے تیرے سکوت کو

کچھ فائدہ کلام سے بھی اے زباں اٹھا

(407) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

KHamosh Is Tarah Se Na Jal Kar Dhuan UTha In Urdu By Famous Poet Abu Zahid Sayyad Yahya Husaini Qadr. KHamosh Is Tarah Se Na Jal Kar Dhuan UTha is written by Abu Zahid Sayyad Yahya Husaini Qadr. Enjoy reading KHamosh Is Tarah Se Na Jal Kar Dhuan UTha Poem on Inspiration for Students, Youth, Girls and Boys by Abu Zahid Sayyad Yahya Husaini Qadr. Free Dowlonad KHamosh Is Tarah Se Na Jal Kar Dhuan UTha by Abu Zahid Sayyad Yahya Husaini Qadr in PDF.