قید تنہائی

دور آفاق پہ لہرائی کوئی نور کی لہر

خواب ہی خواب میں بیدار ہوا درد کا شہر

خواب ہی خواب میں بیتاب نظر ہونے لگی

عدم آباد جدائی میں سحر ہونے لگی

کاسۂ دل میں بھری اپنی صبوحی میں نے

گھول کر تلخئ دیر میں امروز کا زہر

دور آفاق پہ لہرائی کوئی نور کی لہر

آنکھ سے دور کسی صبح کی تمہید لیے

کوئی نغمہ، کوئی خوشبو، کوئی کافر صورت

بے خبر گزری، پریشانیٔ امید لیے

گھول کر تلخئ دیروز میں امروز کا زہر

حسرت روز ملاقات رقم کی میں نے

دیس پردیس کے یاران قدح خوار کے نام

حسن آفاق، جمال لب و رخسار کے نام

(3024) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Qaid-e-tanhai In Urdu By Famous Poet Faiz Ahmad Faiz. Qaid-e-tanhai is written by Faiz Ahmad Faiz. Enjoy reading Qaid-e-tanhai Poem on Inspiration for Students, Youth, Girls and Boys by Faiz Ahmad Faiz. Free Dowlonad Qaid-e-tanhai by Faiz Ahmad Faiz in PDF.