ہم تو بچپن میں بھی اکیلے تھے

ہم تو بچپن میں بھی اکیلے تھے

صرف دل کی گلی میں کھیلے تھے

اک طرف مورچے تھے پلکوں کے

اک طرف آنسوؤں کے ریلے تھے

تھیں سجی حسرتیں دکانوں پر

زندگی کے عجیب میلے تھے

خود کشی کیا دکھوں کا حل بنتی

موت کے اپنے سو جھمیلے تھے

ذہن و دل آج بھوکے مرتے ہیں

ان دنوں ہم نے فاقے جھیلے تھے

(801) ووٹ وصول ہوئے

Related Poetry

Your Thoughts and Comments

Hum To Bachpan Mein Bhi Akele The In Urdu By Famous Poet Javed Akhtar. Hum To Bachpan Mein Bhi Akele The is written by Javed Akhtar. Enjoy reading Hum To Bachpan Mein Bhi Akele The Poem on Inspiration for Students, Youth, Girls and Boys by Javed Akhtar. Free Dowlonad Hum To Bachpan Mein Bhi Akele The by Javed Akhtar in PDF.