ہم پر تمہاری چاہ کا الزام ہی تو ہے

ہم پر تمہاری چاہ کا الزام ہی تو ہے

دشنام تو نہیں ہے یہ اکرام ہی تو ہے

کرتے ہیں جس پہ طعن کوئی جرم تو نہیں

شوق فضول و الفت ناکام ہی تو ہے

دل مدعی کے حرف ملامت سے شاد ہے

اے جان جاں یہ حرف ترا نام ہی تو ہے

دل ناامید تو نہیں ناکام ہی تو ہے

لمبی ہے غم کی شام مگر شام ہی تو ہے

دست فلک میں گردش تقدیر تو نہیں

دست فلک میں گردش ایام ہی تو ہے

آخر تو ایک روز کرے گی نظر وفا

وہ یار خوش خصال سر بام ہی تو ہے

بھیگی ہے رات فیضؔ غزل ابتدا کرو

وقت سرود درد کا ہنگام ہی تو ہے

(205) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Hum Par Tumhaari Chah Ka Ilzam Hi To Hai In Urdu By Famous Poet Faiz Ahmad Faiz. Hum Par Tumhaari Chah Ka Ilzam Hi To Hai is written by Faiz Ahmad Faiz. Enjoy reading Hum Par Tumhaari Chah Ka Ilzam Hi To Hai Poem on Inspiration for Students, Youth, Girls and Boys by Faiz Ahmad Faiz. Free Dowlonad Hum Par Tumhaari Chah Ka Ilzam Hi To Hai by Faiz Ahmad Faiz in PDF.