خواب کے رنگ دل و جاں میں سجائے بھی گئے

خواب کے رنگ دل و جاں میں سجائے بھی گئے

پھر وہی رنگ بہ صد طور جلائے بھی گئے

انہیں شہروں کو شتابی سے لپیٹا بھی گیا

جو عجب شوق فراخی سے بچھائے بھی گئے

بزم شوخی کا کسی کی کہیں کیا حال جہاں

دل جلائے بھی گئے اور بجھائے بھی گئے

پشت مٹی سے لگی جس میں ہماری لوگو

اسی دنگل میں ہمیں داؤ سکھائے بھی گئے

یاد ایام کہ اک محفل‌ جاں تھی کہ جہاں

ہاتھ کھینچے بھی گئے اور ملائے بھی گئے

ہم کہ جس شہر میں تھے سوگ نشین احوال

روز اس شہر میں ہم دھوم مچائے بھی گئے

یاد مت رکھیو یہ روداد ہماری ہرگز

ہم تھے وہ تاج محل جونؔ جو ڈھائے بھی گئے

(709) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

KHwab Ke Rang Dil-o-jaan Mein Sajae Bhi Gae In Urdu By Famous Poet Jaun Eliya. KHwab Ke Rang Dil-o-jaan Mein Sajae Bhi Gae is written by Jaun Eliya. Enjoy reading KHwab Ke Rang Dil-o-jaan Mein Sajae Bhi Gae Poem on Inspiration for Students, Youth, Girls and Boys by Jaun Eliya. Free Dowlonad KHwab Ke Rang Dil-o-jaan Mein Sajae Bhi Gae by Jaun Eliya in PDF.