مجھ سے ساقی نے کہی رات کو کیا بات اے جوشؔ

مجھ سے ساقی نے کہی رات کو کیا بات اے جوشؔ

یعنی اضداد ہیں پروردۂ یک ذات اے جوشؔ

مست و بیگانہ گزر جا کرۂ خاکی سے

یہ تو ہے رہ گزر سیل خیالات اے جوشؔ

اور تو اور خود انسان بہا جاتا ہے

کتنا پر ہول ہے طوفان روایات اے جوشؔ

لوگ کہتے ہیں حجابات نہیں جز آیات

کس سے کہئے کہ یہ آیات ہیں خود ذات اے جوشؔ

اہل الفاظ شریعت پہ مٹے جاتے ہیں

کس کو سمجھاؤں مشیت کے اشارات اے جوشؔ

دیکھیے صبح جنوں ذہن میں کب طالع ہو

عقل سنتا ہوں کہ ہے اک ابدی رات اے جوشؔ

قوت کل کے مصالح سے اور اتنے بدظن

وائے بر دغدغۂ اہل مناجات اے جوشؔ

ساغر مے ہی میں ہوتا ہے طلوع اور غروب

آفریں بر دل رندان خرابات اے جوشؔ

کون مانے گا کہ ہیں عین مشیت واللہ

زندگانی کے یہ بگڑے ہوئے عادات اے جوشؔ

تجھ کو کیا فقر میں راحت ہے کہ شاہی میں فراغ

تو تو ہے خلوتی پیر خرابات اے جوشؔ

(560) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Mujhse Saqi Ne Kahi Raat Ko Kya Baat Ai Josh In Urdu By Famous Poet Josh Malihabadi. Mujhse Saqi Ne Kahi Raat Ko Kya Baat Ai Josh is written by Josh Malihabadi. Enjoy reading Mujhse Saqi Ne Kahi Raat Ko Kya Baat Ai Josh Poem on Inspiration for Students, Youth, Girls and Boys by Josh Malihabadi. Free Dowlonad Mujhse Saqi Ne Kahi Raat Ko Kya Baat Ai Josh by Josh Malihabadi in PDF.