نہ تیرا قرب نہ بادہ ہے کیا کیا جائے

نہ تیرا قرب نہ بادہ ہے کیا کیا جائے

پھر آج دکھ بھی زیادہ ہے کیا کیا جائے

ہمیں بھی عرض تمنا کا ڈھب نہیں آتا

مزاج یار بھی سادہ ہے کیا کیا جائے

کچھ اپنے دوست بھی ترکش بدوش پھرتے ہیں

کچھ اپنا دل بھی کشادہ ہے کیا کیا جائے

وہ مہرباں ہے مگر دل کی حرص بھی کم ہو

طلب کرم سے زیادہ ہے کیا کیا جائے

نہ اس سے ترک تعلق کی بات کر پائیں

نہ ہمدمی کا ارادہ ہے کیا کیا جائے

سلوک یار سے دل ڈوبنے لگا ہے فرازؔ

مگر یہ محفل اعدا ہے کیا کیا جائے

(707) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Na Tera Qurb Na Baada Hai Kya Kiya Jae In Urdu By Famous Poet Ahmad Faraz. Na Tera Qurb Na Baada Hai Kya Kiya Jae is written by Ahmad Faraz. Enjoy reading Na Tera Qurb Na Baada Hai Kya Kiya Jae Poem on Inspiration for Students, Youth, Girls and Boys by Ahmad Faraz. Free Dowlonad Na Tera Qurb Na Baada Hai Kya Kiya Jae by Ahmad Faraz in PDF.